حاملہ ماں فوت ہو گئی لیکن بچہ قبر میں کھیل رہا ہے، حیرت انگیز اسلامی واقعہ

حاملہ ماں فوت ہو گئی لیکن بچہ قبر میں کھیل رہا ہے، حیرت انگیز اسلامی واقعہ




اسلام آباد (آن لائن اردو نیوز) حضرت سیدنا زید بن اسلم رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے کہ میرے والد صاحب نے مجھے ایک واقعہ سنایا کہ ایک دفعہ حضرت عمربن خطاب رضی اللہ تعالی عنہ لوگو ں کے درمیان جلوہ فروز تھے تو اچانک ایک آدمی اپنے بیٹے کو اپنے کندھوں پر سوارکیے ہوئے آیا۔ جب حضرت عمرؓ کی نگاہ اس باپ بیٹے پر پڑی تو آپؓ نے فرمایا کہ جتنی مشابہت ان باپ بیٹوں میں نظر آرہی ہے میں نے آج تک کبھی ایسی مشابہت نہیں دیکھی۔ حضرت عمرؓ کو اس بچے کے والد نے بتایا کہ میرے بیٹے کا واقعہ بہت ہی عجیب و غریب ہے۔ میرے بیٹے کی پیدائش اسکی ماں کے مرجانے کے بعد ہوئی تھی۔ تو آپؓ نے فرمایا کہ مجھے پورا واقعہ تفصیل سے بیان کرو۔ اس شخص نے عرض کی اے امیر المومنینؓ جب میں جہاد کیلئے روانہ ہوا تو میرا بچہ میری زوجہ کے پیٹ میں تھا تو میں نے جہاد پر جاتے وقت دعا کی تھی کہ یا اللہ میری بیوی کے حمل میں جو بچہ ہے تو اسکی حفاظت فرما۔ جب میں جہاد سے واپس آیا تو مجھے بتایا گیا کہ میری زوجہ کا انتقال ہو گیا ہے۔ یہ خبر سن کر مجھے بہت ہی دکھ ہوا میں نے رات میں اپنے چچا زاد بھائی سے کہا کہ مجھے میری زوجہ کی قبر لے جاؤ تو میرا چچا زاد بھائی مجھے میری زوجہ کی قبر لے گیا جب ہم وہاں پہنچے تو ہم کیا دیکھتے ہیں کہ میری زوجہ کی قبر سے ایک روشنی باہر آ رہی ہے۔ میں نے اپنے چچا زاد بھائی سے یہ سوال کیا کہ یہ روشنی کیسی ہے تو میرے چچا زاد بھائی نے مجھے جواب دیا کہ یہ روشنی روزانہ قبر سے باہر آتی ہے نہ جانے یہ کیا راز ہے؟؟ جب میں نے اپنے چچا زاد بھائی کی یہ بات سنی تو میں نے یہ ارادہ کیا کہ میں اس قبر کو کھودوں گا میں نے قبر کھودنے کیلئے ایک پھاؤڑا منگوایا اور ابھی میں نے اس قبر کو کھودنے کا ارادہ ہی کیا تھا کہ یہ قبر کھل گئی۔ میں نے اس قبر کے اندر جھانکا تو میں کیا دیکھتا ہوں کہ میرا بچہ میری زوجہ کی گود میں کھیل رہا ہے جب میں قبر میں اُترا تو کسی آواز دینے والے نے آواز دی کہ تو نے جو امانت اللہ عزوجل کے پاس رکھی تھی وہ تجھے واپس کی جاتی ہے۔ اپنے بچے کو لے جا، اگر تُو اسکی ماں کو بھی اللہ عزوجل کے سپرد کر جاتا تو اسے بھی صحیح وسلامت پاتا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *