سر کی ہڈی کے خطرناک آپریشن کی وجہ سے سر کی ہڈی کو کئی حصوں میں تقسیم کیا گیا، دل دہلادینے والی خبر

سر کی ہڈی کے خطرناک آپریشن کی وجہ سے سر کی ہڈی کو کئی حصوں میں تقسیم کیا گیا، دل دہلادینے والی خبر




دبئی(آن لائن اردو نیوز) ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ برطانیہ کے شہر کارڈف کا رہائشی پانچ سال کا بچہ جس کا نام لیو ہچنسن ہے ایک خطرناک بیماری کرینیو سائنو سٹوس کی گرفت می ہو گیا ہےاس بیماری میں سر کی کھوپڑی قدرتی طور پر آگے اور پیچھے سے بڑھنے لگتی ہے جس سے دماغ پر بہت برا اثر پڑتا ہے۔ مریض ہمیشہ کیلئے بینائی بھی کھو دیتا ہے اور بھی کئی قسم کی پیچیدہ بیماریوں کو شکارہو جاتا ہے۔ اس بچے کی ماں کا کہنا ہے اپنے پہلے بچے کا اس بیماری میں یہ حال مجھ سے دیکھا نہیں جاتا۔ اس بیماری نے مجھے بہت دلبرداشتہ کیا ہے۔

ڈاکٹروں نے اس بچے کے بارے میں کہا ہے کہ جیسے جیسے وقت گزرے گا وقت کے ساتھ ساتھ اس بچے کی بینائی ختم ہو جائے گی۔ اسے کئی قسم کی دماغی بیماریاں بھی ہو سکتی ہیں۔اس بچے کی ماں کا کہنا ہے کہ اس کی پہلی سرجری کے وقت اس بچے کی عمر سات مہینے تھی۔ پہلی سرجری کے دو سال بعد لیو کے اعصاب پر ورم ہونے لگا جو خطرناک علامت تھی۔ان خطرناک علامتوں کو دیکھ کر ڈاکٹروں نےاس بچے کی سر کی ہڈی کو کئی حصوں میں علیحدہ کیا اور پھر آہنی بولٹس کی مدد سے ان حصوں کو جوڑ دیا گیا۔ لیو کی ماں کا کہنا تھا کہ ڈاکٹروں نے کھوپڑی کے دونوں جانب کی ہڈیوں میں سلائیڈرز لگائے گئے اور ان سلائیڈرز کو دن میں دو مرتبہ ایک مخصوص اوزار کی مدد سے حرکت دی جاتی تھی تاکہ دماغ پر زیادہ دباؤ نہ پڑے۔ انکا کہنا تھا کہ یہ اٹھائیس دن میں اپنی زندگی میں کبھی بھی نہیں بھولا پاؤں گی یہ دن میرے لیے بہت تکلیف دہ تھے لیکن ڈاکٹروں کی محنت کی وجہ سے میرا بیٹا اب صحت یاب ہو رہا ہے۔




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *