reman-faris ghazal

محترم رحمان فارس صاحب کا اجمالی تعارف اور خوبصورت غزل

تعارف

رحمان فارس اردو شاعری کا وہ نیا نام جس نے بہت کم عمری میں بے پناہ مقبولیت حاصل کی. رحمان فارس کی شاعری گو محبت کی ہے لیکن انہوں نےمحبت کو بهی نئے زاویوں سے پیش کیا ہے- رحمان فارس اپنے بارے میں کچھ یوں لکهتے ہیں ‘غلامِ مولائے سُخن ھیں فارس
جناب رحمان فارس صاحب کے کلام میں سے ایک خوبصورت غزل قارئین کے لئے پیش خدمت ہے۔

غزل

نم دیدہ دُعاؤں میں اثر کیوں نہیں آتا ؟
تُو عرشِ تغافُل سے اُتر کیوں نہیں آتا ؟

مَیں آپ کے پَیروں میں پڑا سوچ رھا ھُوں
مَیں آپ کی آنکھوں کو نظر کیوں نہیں آتا

اب شام ھوئی جاتی ھے اور شام بھی گہری
اے صُبح کے بُھولے ھُوئے ! گھر کیوں نہیں آتا ؟

چوکھٹ سے ھی لپٹا ھے کئی دن سے سوالی
عاشق ھے تو دھلیز گُذر کیوں نہیں آتا ؟

کرتے ھیں محبت کی طرح کارِ ھوس لوگ
ھم بے ھُنَروں کو یہ ھُنر کیوں نہیں آتا ؟

دریائے محبت سے ملے ھیں کئی کنکر
مُٹھی میں ترے جیسا گُہَر کیوں نہیں آتا ؟

اک بار بھی آیا نہیں وہ اور مری ضد ھے
وہ شخص یہاں بارِ دگر کیوں نہیں آتا ؟

کیوں خون کے قطرے نہیں لہراتے رگوں میں ؟
اے دل ! تری شاخوں پہ ثمر کیوں نہیں آتا ؟

وہ عقل کے اندھے ھیں جو کہتے ھیں کہ فارس
اللّہ اگر ھے تو نظر کیوں نہیں آتا ؟؟؟

انتخاب:ڈاکٹر عادل فہیم ، ابوظہبی متحدہ عرب امارات

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *