Shozaib Kashir Unique Ghazal In Roman

Shozaib Kashir Unique Ghazal

شوزیب کاشر صاحب کے لاجواب کلام میں خوبصورت غزل تحریری اور ویڈیو کی صورت میں پیش ہے۔

صحرا میں کڑی دھوپ کا ڈر ہوتے ہوئے بھی
سائے سے گریزاں ہوں شجر ہوتے ہوئے بھی

ماں باپ کا منظورِ نظر ہوتے ہوئے بھی
محرومِ وراثت ہوں پسر ہوتے ہوئے بھی

یہ جبرِ مشیت ہے کی تنہائی کی عادت
میں قید ہوں دیوار میں در ہوتے ہوئے بھی

ہم ایسے پرندوں کی ہے اک پیڑ سے نسبت
اُڑ کر کہیں جاتے نہیں پر ہوتے ہوئے بھی

ہر چیز لُٹا دینا فقیروں کا ہے شیوہ
کم ظرف ہیں کچھ صاحبِ زر ہوتے ہوئے بھی

Shozaib Kashir Unique Ghazal In Video 

 

اُس دیس کا باسی ہوں کی جس دیس کا ہاری
مایوس ہے شاخوں پہ ثمر ہوتے ہوئے بھی

سورج سے کرے دوستی اک کُور بسر کیا
جلوے کی نہیں تاب نظر ہوتے ہوئے بھی

کچھ ہار گئے جبر کے باوصف بھی ظالم
کچھ جیت گئے نیزوں پہ سر ہوتے ہوئے بھی

تجھ جیسا عدد اپنے تئیں کچھ بھی نہیں ہے
میں تیری ضرورت ہوں صفر ہوتے ہوئے بھی

ہسنا مری آنکھوں کا گوارا نہیں اُس کو
اور دیکھ نہیں سکتا ہے تر ہوتے ہوئے بھی

پھر دشت نوردی نے دکھائی یہ کرامت
میں شہر میں تھا شہر بدر ہوتے ہوئے بھی

اس بار تھے کچھ دوست مرے مدِّ مقابل
سینے پہ سہے وار سپر ہوتے ہوئے بھی

ایسے بھی زبوں حال کئی لوگ ہیں کاشرؔ
بےگھر ہیں اسی شہر میں گھر ہوتے ہوئے بھی

Shozaib Kashir Unique Ghazal In Roman

Shozaib Kashir Unique Ghazal In Roman
Sehraa mein kari dhoop ka dar hotay hoe bhi
Saaye se gorezan hon shajar hotay hoe bhi
Maa Baap ka manzor e nazar hotay hoe bhi
Mahrom e waarsat hon pasar hotay hoe bhi
Yeh jabar Mushiyat hai ki tanhai ki aadat
Main qaid hon deewar mein dar hotay hoe bhi
Hum aisay parindon ki hai ik paird se nisbat
Urr kar kahin jatay nahi par hotay hoe bhi
Har cheez Luta dena faqeero ka hai Shewa
Kam zarf hain kuch sahib zar hotay hoe bhi
Uss dais ka baasi hon ki jis dais ka haari
Mayoos hai shaakhon pay samar hotay hoe bhi
Sooraj se kere dosti ik cover busr kya
Jalwey ki nahi taab nazar hotay hue bhi
Kuch haar gaye jabar ke bavsf bhi zalim
Kuch jeet gaye naizon pay sir hotay hue bhi
Tujh jaisa Adad apne tain kuch bhi nahi hai
Mein teri zaroorat hon sifar hotay hue bhi
Hasna meri aankhon ka gawara nahi uss ko
Aur dekh nahi sakta hai tar hotay hue bhi
Phir dasht nordi ne dikhayi yeh karamat
Mein shehar mein tha shehar badar hotay hoe bhi
Is baar thay kuch dost marey mdd e muqabil
Seenay pay sahy waar super hotay hoe bhi
Aisay bhi Zaboon haal kayi log hain Kashir
Be ghar hain isi shehar mein ghar hotay hue bhi.
Shozaib Kashir Unique Ghazal In Roman
 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *