Shahzad Nayyar Unique Ghazals

      No Comments on Shahzad Nayyar Unique Ghazals
Shahzad Nayyar Unique Ghazals

‎جب بھی چُپکے سے نکلنے کا ارادہ باندھا
‎مجھ کو حالات نے پہلے سے زیادہ باندھا

‎چلتے پھرتے اسے بندش کا گماں تک نہ رھے
‎اُس نے انسان کو اس درجہ کشادہ باندھا

‎کتنی بھی تیز ھوئی حِرص و ھوس کی آندھی
‎ھم نے اک تار ِ توکل سے لبادہ باندھا

‎یک بہ یک جلوہء تازہ نے قدم روک لئے
‎!میں نے جس آن پلٹنے کا ارادہ باندھا

‎تو نے سامان میں جب باندھ ھی دی تھی منزل
‎کس لئے یار مرے پاؤں میں جادہ باندھا

‎اس نے دل باندھ کے اک آن میں بازی جیتی
‎ھم تو سمجھے تھے فقط ایک پیادہ باندھا

‎سادگی حسن کی شعروں میں بیاں کرنی تھی
‎لفظ آسان چُنے، مصرع سادہ باندھا “

Shahzad Nayyar New Ghazals

Shahzad Nayyar Unique Ghazals

تو بنا کے پھر سے بگاڑ دے ، مجھے چاک سے نہ اُتارنا
رہوں کو زہ گر ترے سامنے، مجھے چاک سے نہ اُتارنا

تری ”چوبِ چاک “ کی گردشیں مرے آب وگِل میں اُتر گئیں
مرے پاﺅں ڈوری سے کاٹ کے مجھے چاک سے نہ اُتارنا

تری اُنگلیاں مرے جسم میں یونہی لمس بن کے گڑی رہیں
کفِ کوزہ گر مری مان لے مجھے چاک سے نہ اُتارنا

مجھے رکتا دیکھ کے کرب میں کہیں وہ بھی رقص نہ چھوڑ دے
کسی گردباد کے سامنے، مجھے چاک سے نہ اُتارنا

ترا زعم فن بھی عزیز ہے، بڑے شوق سے تُو سنوار لے
مرے پیچ و خم، مرے زاوئیے، مجھے چاک سے نہ اُتارنا

ترے’ سنگِ چاک“ پہ نرم ہے مری خاک ِ نم، اِسے چھوتا رہ
کسی ایک شکل میں ڈھال کے مجھے چاک سے نہ اُتارنا

مجھے گوندھنے میں جو گُم ہوئے ترے ہاتھ، اِن کا بدل کہاں
کبھی دستِ غیر کے واسطے مجھے چاک سے نہ اتارنا

ترا گیلا ہاتھ جو ہٹ گیا مرے بھیگے بھیگے وجود سے
مجھے ڈھانپ لینا ہے آگ نے، مجھے چاک سے نہ اتارنا

Shahzad Nayyar Best Ghazals

shahzad-nayyar3

شکستہ چھت میں پرندوں کو جب ٹھکانہ ملا
میں خوش ہوا کہ مرے گھر کو بھی گھرانہ ملا

فلک پہ اڑتے ہوئے بھی نطر زمیں پہ رہی
مزاج مجھ کو مقدر سے طائرانہ ملا

ہم اس کے حسنِ سخن کی دلیل کیا دیں گے
وہ جتنی بار ملا ہم سے ، برملا نہ ملا

کسی کی دیکھتی آنکھیں بھی آس پاس رہیں
تجھے ملا تو بہ احساسِ مجرمانہ ملا

میں اپنی بات درختوں سے کہہ کے روتا ہوں
کہ میرے غم کو کسی رت نہ آشیانہ ملا

اب آ گیا ہے تو چپ چاپ خامشی کو سن
مرے سکوت میں اپنی کوئی صدا نہ ملا

لڑی سی ٹوٹ کے آنکھوں سے گر پڑی نیر
لبوں سے حرف کا کوئی بھی سلسلہ نہ ملا
شہزاد نیر

Shahzad Nayyar Poetry In Urdu

Shahzad Nayyar Unique Ghazals

بے سبب پيار ميں کمی پہ نہ آ
اے مرے دوست!دشمنی پہ نہ آ

رہ روِ عشق ! کچھ ڈگر کا خيال
اتنی دور آکے کج روی پہ نہ آ

ہم نشيں ! حرمت ِسخن تک رہ
اس ميں امکانِ بے زری پہ نہ آ

چشمِ مغرورِ اختيار! پلٹ
ديکھ يوں ميری بے بسی پہ نہ آ

دلبرِشوخ ! دلبری پر رک
آتے آتے تو دل لگی پہ نہ آ

کيا خبر کل کدھر چلا جاۓ
دل ! مری مان ،اجنبی پہ نہ آ

دلبرا ! دل ميں کچھ قيام ذرا
مُطربا ! سازِ رخصتی پہ نہ آ

جانِ آشفتہء طوالتِ ہجر
بے قراری سے بے دلی پہ نہ آ

حرف رکھنا ہے تو مجھی پر رکھ
نکتہ چيں! میری شاعری پہ نہ آ
شہزاد نیر

Shahzad Nayyar Ghazals

Shahzad Nayyar Unique Ghazals

گر جائیں زمیں پر تو سنبھالے نہیں جاتے
بازار میں دکھ درد اچھالے نہیں جاتے!

جاتے نہیں صحراؤں کو ہم عشق گرفتہ
جب تک دل مجنوں کی دعا لے نہیں جاتے

اب مجھ سے ان آنکھوں کی حفاظت نہیں ہوتی
اب مجھ سے ترے خواب سنبھالے نہیں جاتے

آنکھوں سے نکلتے ہو مگر دھیان میں رکھنا
تم ایسے کبھی دل سے نکالے نہیں جاتے

ایسا بھی نہیں چھوڑ کے جاتے نہیں خوباں
جاتے ہیں مگر لوٹنے والے نہیں جاتے!

جنگل کے یہ پودے ہیں انہیں چھوڑ دے نیر
غم آپ جواں ہوتے ہیں پالے نہیں جاتے
شہزاد نیر

Shahzad Nayyar

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *