Sabeen Saif Introduction And Ghazal

      No Comments on Sabeen Saif Introduction And Ghazal
Sabeen Saif Ghazal

محترمہ ثبین صاحبہ کا مختصر تعارف اور ایک غزل

تعارف
محترمہ ثبین سیف صاحبہ کا تعلق کراچی سے ہے ۔آپکی جائے پیدائش اور سکونت وہ کراچی ہی ہے۔محترمہ ثبین سیف صاحبہ کہتی ہیں کہ ایک شاعر کی مصروفیت تو شاعری ہی ہوتی ہے اگر وہ اپنے گھر اور اہل او عیال کے لئے کام کرتا ہے تو میرے نزدیک وہ مشقت کر رہا ہے ۔ثبین سیف صاحبہ سے شاعری کی شروعات کے بارے میں پوچھا گیاتو انہوں نے بہت ہی خوبصورت جواب دیا ۔
وہ کہتی ہیں کہ جب آنکھ سے نکلا ہوا آنسو گالوں پر گرنے کی بجائے جب میرے دل پے گرا اس وقت سے میں نے شاعری شروع کر دی ۔آپکے پسندید شاعر مرزاغالب ہیں انکا ایک شعر جو مجھے بہت پسند ہے
رگوں میں دوڑنے پھرنے کے ہم نہیں قائل
جب آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

Sabeen Saif Ghazal

آج کے تازہ کلام میں انکے خوبصورت کلام میں سے ایک غزل قارئین کرام کے لئے پیش خدمت ہے ۔
 انتخاب:عادل فہیم ابوظہبی ،متحدہ عرب امارات
غزل
قیامت خود پہ ڈہانا چاہئیے نا
اُسے اب بھول جانا چاہئیے نا
سنا ہے اُس کا در خاکِ شفا ہے
سو آنکھوں سے لگانا چاہئیے نا
یہ کیا کہ غیر ہی اس کو دُکھائیں
یہ دل خود بھی دُکھانا چاہئیۓ نا
جہاں جُھکتا رہا ہے دل ہمیشہ
وہیں سر کو جُھکانا چاہئیۓ نا
میں اُس کے واسطے کافی نہیں ہوں
اُسے سارا زمانہ چاہئیۓ نا

Sabeen Saif Ghazal In Hindi

Sabeen Saif Ghazal

क़यामत ख़ूद पे ढाना चाहिए नां
उसे भी  भूल  जाना   चाहिए नां
सुना है उसका दर ख़ाके शिफा है
सो आंखो से  लगाना   चाहिए नां
ये क्या  के  ग़ैर  ही  उसको  दुखाएं
ये दिल ख़ूद भी दुखाना  चाहिए नां
जहां झुकता रहा है दिल हमेशा
वहीं सर को झुकाना चाहिए नां
मैं उसके वासत़े काफी नहीं हूं
उसे सारा  ज़माना  चाहिए नां
शाएर:सबीन सैफ।

Sabeen Saif Ghazal In Roman

Sabeen Saif Ghazal

Qayamat khud pay dahana  chahiye na
Ussay ab bhool jana chahiye na
Suna hai uss ka dar khakِ-e-Shifa hai
So aankhon se lagana chahiye na
Yeh kya ke ghair hi is ko deikhein
Yeh dil khud bhi dukhana chahiye na
Jahan jhukta raha hai dil hamesha
Wahein sir ko Jhukana chahiye na
Mein uss ke wastay kaafi nahi hon
Ussay sara zamana chahiye na

Sabeen Saif Introduction And Ghazal In Ghazals

Sabeen Saif Ghazal

Introduction:

Sabeen Saif was born on 28th August in Karachi. She lives in Karachi but used to go America. She said when drop of tear fell into my heart then my first poetry comes out. His favorite poet Ghalib. Her wish: ‘i want to do good for society and i will start it from my home. Don’t catch any bird.’ Her favorite verses are:

We are not convinced that runs in veins,
Unless it comes out from eyes. It is not blood!

Sabeen Saif Ghazal In English

i have to apply doomsday on me,
i have to forget him now.
i heard his place is clay of healing,
So i have to apply it on my eyes.
What is this? just unknown tease this,
I have to tease this heart by myself
Where my heart bents every time,
I have to bent my head there too.
I am not enough for him,
He need whole era with him.
(Selection: Adil Faheem, Abu Dhabi, UAE)

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *