Mustafa Dilkash Introduction And Ghazals

      No Comments on Mustafa Dilkash Introduction And Ghazals
mustafa dilkash ghazals

مصطفیٰ دلکش صاحب کا تعارف اور کلام

تعارف
مصطفیٰ دلکش صاحب کا بہت اچھے شاعر ہیں۔ مصطmustafa dilkash ghazalsفیٰ دلکش صاحب کا اصلی نام محمد مصطفیٰ ولد عتیق الرحمن ہے۔ مگرجب قلم سے رشتہ جڑا تو انہوں نے اپنا نام مصطفیٰ دلکش رکھ لیا۔ آپ 3 اکتوبر 1966کوگنگوارہ سیتامڑھی بہاربھارت میں پیدا ہوئے۔ آج مصطفیٰ دلکش صاحب کے خوبصورت کلام میں سےچند منتخب غزلیں قارئین کرام کے لئے پیش خدمت ہے

انتخاب: عثمان عاطس

غزلیں

میری  نگا ہِ   شوق  کو  رسوا   نہ   کیجئے

mustafa dilkash ghazals

میری  نگا ہِ   شوق  کو  رسوا   نہ   کیجئے
پردا  بہت  مہین  ہے   پردا   نہ   کیجئے
کیا جانے کب سمیٹ لے اپنے وجود میں
آئینے  کو  قریب  سے  دیکھا  نہ   کیجئے
جھو نکا  ہوں میں  ہوا  کا مرا اعتبا ر  کیا
ہر وقت میرے با رے میں سوچا نہ کیجئے
وقتِ  نماز  عشق  و  محبت  جو ذہن  میں
ہو ں  مختلف  خیا ل   تو  سجدا  نہ   کیجئے
ممکن  ہے اس کے خواب کی تکمیل ہو  و ہیں
پردیس   جانے   والے  کا   پیچھا   نہ   کیجئے
زنجیر   تو ڑ   دیجئے   رسم  و   رو اج   کی
بیٹے  کی   شا دی   کیجئے   سو دا   نہ   کیجئے
دل  تو ڑ نا  عذا ب  ہے  تو ہینِ عشق  ہے
دلکش کی  بات  بات  پہ   روٹھا   نہ   کیجئے
مصطفیٰ دلکش

mustafa-dilikash-6

ا رما نوں  کے پھول سجا ئے بیٹھے  ہو

ا رما نوں  کے پھول سجا ئے بیٹھے  ہو
کس موسم کی آس  لگا ئے  بیٹھے  ہو
کس کے آنے کی بے چینی ہے تم کو
دروازے  سے کان  لگا ئے بیٹھے  ہو
کچھ تو بو لو کب سے بو جھل آنکھوں میں
اپنے  دل  کا  درد   چھپا ئے   بیٹھے  ہو
اپنے  دل  کی   ایک  تمنّا   کی  خا طر
سا ری  دنیا   کو  ٹھکرا ئے   بیٹھے   ہو
چا ند سا چہرہ با دل میں چھپ  جا تا ہے
اپنی  زلفیں  کیوں  بکھرا ئے   بیٹھے  ہو
یہ   تو   بتا ؤ    جگنو   کیسے   آ ئے   گا
گھر  کی  چھت  پر  دیپ جلا ئے بیٹھے ہو
شا ید تم کو ہوش نہیں ہے  اے  دلکش
انگا روں  پر  جا ل  بچھا ئے  بیٹھے   ہو
مصطفیٰ دلکش

mustafa dilkash ghazalsدل سے رشتہ ہے نہ دلدار سے رشتہ  اپنا

دل سے رشتہ ہے نہ دلدار سے رشتہ  اپنا
پا گلوں  کی  طرح  دیوار  سے  رشتہ  اپنا
جانے کیوں کر مرے ہونٹوں کا لہو سوکھ گیا
میں  بتا  بھی  نہ  سکا  یا ر  سے  رشتہ  اپنا
اپنے  دلبر سے جنہیں ٹھیس بہت لگتی  ہے
جو ڑ لیتے  ہیں  وہ  با زا ر سے  رشتہ  اپنا
بے خطا اس نے ہی جب عہدِ وفا تو ڑ دیا
میں نے بھی تو ڑ دیا  پیا ر سے رشتہ  اپنا
پھول اشکوں کےہوں یا پھول مرےزخم کے ہوں
غیر ممکن  ہے  خرید ا ر  سے   رشتہ   اپنا
اب کسی  سے   مجھے  اقرا ر  کی   امید  نہیں
اپنی  قسمت میں لکھا  ہے انکا ر سے رشتہ اپنا
کسی گھنگھرو  کی طرح  ٹوٹ  گیا   اے  دلکش
اس کی پا ز یب کی  جھنکا ر  سے  رشتہ   اپنا
مصطفیٰ دلکش

میں صفت کو مثال ر کھا تھا

mustafa dilkash ghazals

          میں صفت کو مثال ر کھا تھا
          آ ئنہ وہ سنبھا ل  ر کھا  تھا
       سو کھے ٹکڑ ے سہی میاں  لیکن
         ر زق میں نے حلا ل ر کھا تھا
       جا ن اس کی اسی نے  لی  آ خر
       جو د ر ند ہ   وہ  پا ل ر کھا  تھا
       یوں ہوا جھو ٹ سچ سے ہا ر گیا
        اس نے کیا کیا مثا ل ر کھا تھا
       کیا ستم  ہے  ا سے  بھلا  بیٹھا
        جس نے میرا خیا ل ر کھا تھا
     لے  گیا  چھین کر  بلند ی  وہ
       میرے حق میں زوال ر کھا تھا
      اپنا دکھ بھو ل بیٹھا  تھا  دلکش
درد ِ  اغیا ر پا ل ر کھا  تھا
مصطفیٰ دلکش

mustafa dilkash ghazals

ا رے یہ روپ یہ سنگھا ر میری جان لو گے کیا

ا رے یہ روپ یہ سنگھا ر میری جان لو گے کیا
میں سر تا پا مسلماں ہوں مرا ایمان لو گے  کیا
دگھا وے پر نہیں جانا  حقیقت  پر نظر   ڈ ا لو
اندھیری رات میں جگنو کو سورج مان لو گے کیا
محبت کا بہت دم بھر تے ہو  میرے تعلق سے
کسی بھی حال میں آؤں  مجھے پہچان لو گے   کیا
یہ غیرت کے طمانچے روح پر کیا جھیل پاؤ گے
بتاؤ تم  کسی کم  ظرف کا  احسان  لو گے  کیا
یہ مانا  میں تمہارے قد سے نیچا ہی سہی  لیکن
ا رے دلکش کو تم کیا اتنا بھی آسان لوگے کیا
مصطفیٰ دلکش

mustafa dilkash ghazals

گلے لگ جا مرے اب دوریاں اچھی نہیں لگتیں

گلے لگ جا مرے اب دوریاں اچھی نہیں لگتیں
مری جاں مجھ کو  یہ تنہائیاں اچھی نہیں  لگتیں
مجھے ڈستی ہیں ناگن کی طرح پل پل تری یادیں
تمہا ر ے   بن  مجھے   پروا ئیاں   نہیں  لگتیں
جسے دیکھو وہ دشمن ہے محبت  کا یہاں  جا نا ں
کہیں چل اور اب یہ بستیا ں  اچھی نہیں لگتیں
ابھی بھی گشت کرتا ہے خیالوں میں ترا  آ نچل
مجھے یہ رنگ برنگی  تتلیا ں  اچھی نہیں  لگتیں
ابھی بھی ہے مرے شانے پہ زلفیں یار کی خوشبو
ہوا سن لے تری شرمستیا ں اچھی نہیں لگتیں
یقیں کرنا مری اے گل بدن تیری قسم مجھ کو
مجھے اب پھولوں کی رعنا ئیا ں اچھی نہیں لگتیں
ابھی بھی ہے نگا ہوں میں مرے محبوب کا چہرہ
شفق کے گال پر اب سرخیاں  اچھی نہیں لگتیں
محبت بیٹیو ں سے تھی مرے سرکا ر کو  دلکش
میں کیسے کہدوں مجھ کو بیٹیاں اچھی نہیں لگتیں
مصطفیٰ دلکش

mustafa dilkash ghazalsمعالجہ  کے لئے  چارہ  گر نکلنے لگے

معالجہ  کے لئے  چارہ  گر نکلنے لگے
خوشی مناؤ کہ چیونٹی کےپر نلکنے لگے
تو اپنے رحم و کرم کو نہ روک پائےگا
ہماری آنکھوں سے آنسو اگر نلکنے لگے
وطن میں لٹ کے میں جب آیا تو دریچوں سے
تماشہ   دیکھنے   والوں  کے   سر   نکلنے   لگے
یہ معجزہ  نہیں تیرا  تو  پھر  اور  کیا   ہے
درخت سوکھ ا تھا  پھر بھی  ثمر نکلنے  لگے
ستارے  پہلے  نکلتے تھے رات  میں  دلکش
مگر یہ  کیا  کہ  بوقتِ  سحر   نکلنے   لگے
مصطفیٰ دلکش

mustafa dilkash ghazals

غم کا یوں اعتدال کرتے ہو

غم کا یوں اعتدال کرتے ہو
تم جنوں کو حلال کرتے ہو
mustafa dilkash ghazals
گفتگو بے  مثال  کر تے   ہو
تم بھی کیا کیا کمال کرتے ہو
بے  ارادہ  ہی  ملنے  آ جا ؤ
دن مہینہ  وہ  سال کرتے ہو
میں تمہیں جانتا ہوں یار میرے
تم کہاں مجھ کو ڈھال کرتے ہو
روز لاتے ہو  بیوی  کے  تحفے
ماں کا بھی کچھ خیال کرتے ہو
جب بھی کرتے ہو گفتگو کوئی
بس  سلگتا  سوال  کر تے  ہو
جس نے برباد  کر دیا  تم  کو
تم  اسی  کا  ملا ل کرتے  ہو
اپنے چہرے پہ ڈال کر زلفیں
میرا  جینا  محا ل کر تے ہو
غیر کے  واسطے  ا ر ے  دلکش
خود کو تم کیوں نڈھال کرتے ہو
مصطفیٰ دلکش

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *