موسمِ وصل کے امکان میں رکھے ہوئے ہیں شاعر قمر ریاض

qamar-riaz

موسمِ  وصل   کے   امکان  میں رکھے   ہوئے    ہیں
کچھ حسیں لوگ مِرے دھیان میں رکھے ہوئے ہیں

کون   کیا    سوچتا ، کیا  کرتا   ہے   کیسے  جانیں؟
کچھ   الگ   سلسلے  اِنسان  میں رکھے  ہوئے   ہیں

صُوفی. جس  مستی   میں   تُو   ناچتا ،  اتراتا ہے
رقص یہ سب ،  مِرے وجدان میں رکھے ہوئے ہیں

اس غزل کی ویڈیو دیکھنے کے لئے یہاں کلک کریں

تیرے   آنے   کی  خبر  سن  کے میں یوں مہکا ہوں
عِطر  جیسے  مرے  دالان   میں  رکھے  ہوئے  ہیں

حُسن   پلتا  ھے   کبھی  جھونپڑی   میں اور کہیں
ہیرے  کچھ   کوئلے   کی کان میں رکھے ہوئے ہیں

شعر   سن  کر مِرے اُس شوخ نے جو  پھول دئیے
میں   نے   وہ چُوم کے گلدان میں رکھے ہوئے ہیں

اِس   لئے  چاہتا   ھوں   تُجھ   پہ  نچھاور    ہونا
عِشق   نے   فائدے    نُقصان   میں رکھے ہوئے ہیں

میں   بچھڑنے   کا   جو  سوچوں تو لرز اُٹھتا ہوں
ہِجر   کے   خوف   مری   جان میں رکھے ہوئے ہیں

پچھلی بارش میں جو بھیگے تھے، وہ جُوتے تیرے
اب بھی کیچڑ سے بَھرے ! لان میں رکھے ہوئے ہیں

تِری   آوازوں  سے ، تصویروں سے ، تحریروں  سے
بھرے  فون  آج   بھی سامان میں رکھے ہوئے ہیں

وہ اگر مجھ سے گُریزاں ھے تو میں نے بھی قمرؔ
فیصلے   آخری   اِعلان    میں   رکھے   ہوئے   ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *