Mohabbat bhi ibadat hai By Zara Fraz

Mohabbat bhi ibadat hai By Zara Fraz

زارا فراز صاحبہ کی بہت ہی خوبصورت نظم “محبت بھی عبادت ہے” پیش خدمت ہے۔

محبت بھی عبادت ہے
عبادت دل سے ہوتی ہے
تمنائیں مقدس ہیں
انھیں ہی سینچ کر دل میں
وفا پروان چڑھتی ہے
وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں
عبادت کے لئے بھی جو
کبھی رمضان
کبھی شعبان
کبھی معراج کی شب کو
فقط مخصوص کرتے ہیں
عبادت کے لئے کوئی بھی دن مخصوص کیا کرنا؟
محبت بھی عبادت ہے
اسے بھی لوگ جانے کیوں
کسی مخصوص ماہ و سال پر کیوں چھوڑ دیتے ہیں؟
مرے دل کو یہ لگتا ہے
محبت بس عبادت ہے
“عبادت روز ہوتی ہے”
قضا جس نے محبت کی
وہی چاہت ادھوری کی
ادھورا عشق
ادھورا پیار
ادھوری چاہتیں…… اے دوست!
کبھی تکمیل کیا پائیں
بہت سے لوگ ہوتے ہیں
ادھورا پیار کرتے ہیں
آدھوری راہ تک چل کر
کہیں منزل سے پہلے ہی
سہارا چھین لیتے اور
وعدے توڑ دیتے ہیں
وہ دل بھی توڑ دیتے ہیں
محبت چھوڑ دیتے ہیں
عبادت چھوڑ دیتے ہیں
محبت بھی عبادت ہے

Mohabbat bhi ibadat hai By Zara Fraz

Mohabbat bhi ibadat hai By Zara Fraz

Mohabbat bhi ibadat hai
Ibadat dil se hoti hai
Tamannaye muqaddas hain
Unhein hi sinch kar dil mein
Wafa parwan chadhti hai
Woh kaisay log hotay hain
Ibadat ke liye bhi jo
Kabhi ramdhan
Kabhi shabaan
Kabhi mairaaj ki shab ko
Faqat makhsoos karte hain
Ibadat ke liye koi bhi din makhsoos kya karna ?
Mohabbat bhi ibadat hai
Usay bhi log jaane kyun
Kisi makhsoos mah o saal par kyun chore dete hain ?
Marey dil ko yeh lagta hai
Mohabbat bas ibadat hai
” Ibadat roz hoti hai “
Qaza jis ne mohabbat ki
wohi chahat adhuri ki
Adhoora ishhq
Adhoora pyar
Udhuri chahtain. .. .. . ae dost !
Kabhi takmeel kya payen
Bohat se log hotay hain
Adhoora pyar karte hain
Udhuri raah taq chal kar
Kahin manzil se pehlay hi
Sahara chean letay aur
Waday toar dete hain
Woh dil bhi toar dete hain
Mohabbat chore dete hain
Ibadat chore dete hain
Mohabbat bhi ibadat hai

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *