Kanwal Malik Introduction And Ghazal

      1 Comment on Kanwal Malik Introduction And Ghazal
Kanwal Malik Ghazal

محترمہ کنول ملک صااحبہ کا تعارف اور غزل

تعارف
کنول ملک صاحبہ  دور حاضر کے ابھرتی ہوئی وہ  نوجوان شاعرہ ہیں جنہوں نے بہت کم عمری بہت ساری شہرت حاصل کر لی ہے ۔ کنول ملک صاحبہ 26 دسمبر 1989 کو دبئی میں پیدا ہوئیں۔اور تا حال آپ دبئی میں ہی مقیم ہیں ۔ آپ دبئی کی ایک پرائیویٹ کمپنی میں ایڈمنسٹریشن کی جاب کرتی ہیں ۔ کنول ملک صاحبہ نے 6 گریڈ سے اپنی شاعری کی شروعات کی ۔شروع میں آپ نعت اور ملی نغمے لکھتی تھیں ۔پھر جب آپ کالج میگزین کی چیف ایڈیٹر بنی تب آپکی شاعری پہلی کتاب تمھیں تم سے ہی مانگا ہے منظر عام پر آ گئی۔

دسمبر 2009 میں ابراہیمی ریسٹوڑنٹ دبئی میں اظہار حیدر صاحب کی یاد میں اردو منزل کے مشاعرے میں شرکت کی اسوقت آپ گریجویشن کی  سٹوڈنٹ تھیں ۔  کنول ملک صاحبہ کہتی ہیں کہ میں اردو ادب کی پروین شاکر بننا چاہتی ہوں۔آپ نے امارات کے علاوہ برطانیہ کی ادبی سفر کیا ہے ۔سعودی عرب اور انڈیا جانے کی خواہش رکھتی ہیں ۔ کنول ملک کی پسندیدہ شعراء میں جناب امجد اسلام امجد ۔فیض، احمد فراز، قتیل شفائی، ساحر لدھیانوی، افتخار عارف، ناصر کاظمی اور پروین شاکر شامل ہیں ۔

Kanwal Malik Ghazalایک شعر جو آپکو بہت پسند ہے۔
آدم کی کسی روپ میں تحقیر نہ کرنا
پھرتا ھے زمانے میں خدا بھیس بدل کر

آج کے تازہ کلام میں محترمہ کنول ملک صاحبہ کے خوبصورت کلام میں سے ایک غزل قارئین کرام کے لئے پیش خدمت ہے

انتخاب:ڈاکٹر عادل فہیم ابو ظہبی متحدہ عرب امارات

غزل
کھیل تھی کیا؟ سمجھ میں آجاتیKanwal Malik Ghazal
یہ محبت تو تھی طلسماتی
آپ کی بات تو نہیں کی ہے
آپ کیوں ہو رہے ہیں جذباتی
قید خود کو کیا ہے خوابوں میں
اور خود ہی بنی ملاقاتی
دن مرا فائلوں میں دفن ہوا
اور شب بن گئی مناجاتی
جانتی تھی کہ خود کو کھونا ہے
میں اگر ڈھونڈ کر اُسے لاتی
اس کی یادوں میں ہے قرار کنول
ورنہ اس دل کو کیسے بہلاتی

Kanwal Malik Ghazal In Hindi

kanwal-malik-6
खेल थी क्या? समझ में आ जाती
ये मुह़ब्बत तो थी तिलस्माती
आप की बात तो नहीं की है
आप क्यों हो रहे हैं जज़्बाती
क़ैद ख़ूद को किया है ख़्वाबों में
और ख़ूद ही बनी मुलाक़ाती
दिन मेरा फाईलों में दफन हुआ
और शब बन गई मनाजाती
जानती थी के खुद को खोना है
मैं अगर ढूंढ कर उसे लाती
उसकी यादों में बेक़रार कंवल
वरना इस दिल को कैसे बहलाती

Kanwal Malik Ghazal In Roman

Kanwal Malik Ghazal

Khail thi kya? samajh mein ajati
Yeh mohabbat to thi talismati
Aap ki baat to nahi ki hai
Aap kyun ho rahay hain jazbati
Qaid khud ko kya hai khowaboon mein
Aur khud hi bani mulaqati
Din mra faailun mein dafan sun-hwa
Aur shab ban gayi manajati
Janti thi ke khud ko khona hai
Mein agar dhoond kar ussay latayen
Is ki yaado mein hai qarar kanwal
Warna is dil ko kaisay behlaati

Kanwal Malik Introduction And Ghazal

Kanwal Malik Ghazal

Introduction:

Vision to be a Parveen Shakir’ said Kanwal Malik , who is a romantic poet, writes poetry about separation, meeting, and love for God, Prophet, parents, Country, etc. she was born on 26th of December 1989 in Dubai. Now she works in a private company in administration.She starts poetry from 6th grade, in the beginning, she writes Naats and national anthems.

When she becomes Chief Editor, then she writes her first poetry book named ‘Ask you from you.’ The first time she reads poetry in 2009 in December in Ibrahimi Restaurant Dubai. She travels for poetry UAE, UK, Saudi Arabia, She wishes to do Umrah, and goes to India. His favorite poets are Amjad Islam Amjad, Ahmed Faraz, 0Qateel Shafai, Sahir Ludhyanvi, Iftikhar Arif, Nasir Kazmi, Parveen Shakir and Faiz Ahmed Faiz.

Her favorite verses are
Do Not disgrace Adam in every form,
God is roaming in the world changing his appearance.

Kanwal Malik Ghazal

Kanwal Malik Ghazal In English

What was play? I will understand,
This love was magic
I haven’t talked about you,
Why you are getting emotional?
I prisoner myself in dreams,
And myself becomes a visitor.
My day buried in files,
And night becomes in-vocational.
I know that I will leave myself,
If I find him,
The solace is in his memories,
otherwise, how can I coax my heart

Selection by: Adil Faheem, Abu Dhabi, UAE

1 comment on “Kanwal Malik Introduction And Ghazal

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *