Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat

      No Comments on Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat
Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat

Selection By Best Urdu Poetry

تم مجھے کس طرح بھلاؤ گے
ظلم یہ خود پہ کر نہ پاؤ  گے

روح جس میں تمہاری رہتی ہے
وہ محل کیسے تم گراؤ  گے
سلیمان جاذب

ایسا  لگا  کہ گرد-سفر ساری دھل گئی
ہرفکرِجستجومری خوشیوں میں گھل گئی

منزل مزاج پوچھنے آئی جو میرے پاس
ایساخوشی کاجھٹکا لگا آنکھ کھل گئی
مختار تلہری

دیکھے گا کون تیری سیرت کو اب یہاں
عاشق ہیں سب یہاں پر حسن و جمال کے

بربادیوں کی اپنی الزام کس کو دیں
باعث ہیں ہم تو خود ہی اپنے زوال کے
سلیم شوق پورنوی

Urdu Qataat

Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat

اب تو بگڑےہوئےحالات سےجی ڈرتاہے
ہرطرف بڑھتےفسادات سےجی ڈرتاہے

میں نےماناکہ نہیں ان سےرہاکوئی حجاب
پھربھی اظہارِ خیالات جی ڈرتاہے
ح۔ ر ۔ شائق

وقت پھر آئے گا پاگل  کی غلط فہمی ہے
زندگی آج  ابھی ، کل کی غلط فہمی ہے

میں جسے پی کے زمیں عرش پہ لے جاتا ہوں
بس یہ پانی ہے تو بوتل کی غلط فہمی ہے
فیصل صاحب

خوشا قسمت شہہ جود وسخا میرے
کرم کی انتہا ھوھی گئی مجھ پر

میں کب سے دید کا تھا منتظر آقا
نگاہِ لطف وا ھو ھی گئی مجھ پر
نعیم حنیف

فرزند کو نہ اپنے زیادہ پڑھاؤں گا
اُسکو نہ ڈاکٹر نہ ھی افسر بناؤں گا

پیسے کی ریل پیل ھے کرکٹ کے کھیل میں
ھوگا بڑا تو بس اسے کرکٹ سکھاؤں گا
ساجد شاہجہانپوری

Qataat Urdu Poetry

یہ رستہ کٹھن ھے بدلنا پڑیگا
اٹھا کر علم خود نکلنا پڑے گا

کرو دوستی اب عداوت کو چھوڑو
بہت دور تک ساتھ چلنا پڑے گا
توصیف ترنل

Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat

غم کے سوا دلوں کا کچھ اندوختہ نہیں
وہ زندہ دل ہی کیا جو جگر سوختہ نہیں

دل کی کتاب پھاڑ دی کاشرؔ یہ سوچ کر
سب کو پڑھا سکوں یہ وہ آموختہ نہیں
شوزیب کاشرؔ

اب ان آنکھوں میں ترا خواب نہیں آ سکتا
جس طرح جیب میں تالاب نہیں آ سکتا

کیسے ممکن ہے ترے شہر میں رہنے لگ جاؤں
روہی کو چھوڑ کے پنجاب نہیں آ سکتا
آلِ عمر

Famous Urdu Qataat

نعتیہ رباعی پیش
رحمان کا ارحام اثاثہ ہو تم
مزّ مل ومدّ ثر وطٰحہٰ  ہو تم

حامدہےوہ خود تم ہومحمد یعنی
ممدوح خدا وند تعالیٰ ہو تم
شفاعت فہیم

Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat

اتنا ہی نہیں  عرش کے مہمان ہو تم
ایمان کی جاں صاحب – قرآن  ہو تم

اللہ  جو خالق بھی ہے معبود بھی ہے
سچ پوچھو تو اللہ کی پہچان ہو تم

مختار تلہری

اس قدر روئے مرے دیوار و در
تم پلٹ کر دیکهتے  جاتے ہوئے

تربت -مادر پہ پهولوں کی جگہ
چند آنسو رکه دئے روتے ہوئے
آفتاب ترابی

Daur-E-Haazir Ke Shouraa Ke Mashhoor Qataat

آج بھی ماضی میں میرا حال ہے
آج  بھی  حالات میں ، فردا نہیں

ہے مری یادوں میں بچپن جھومتا
رابطہ خوابوں  سے ہے ٹوٹا نہیں
ڈاکٹر حنا امبرین

خواب کو لاجواب اس نے کیا
درد کو بےحساب اس نے کا

لفظ میرے نصاب هین عظمی
عشق کامل کتاب اس نے کیا
عظمی شہزادی

Urdu Qataat

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *