Best Urdu Rubaiyat By Seraj ul Arfeen Seraj

Best Urdu Rubaiyat By Seraj ul Arfeen Seraj

سراج العارفین سراج صاحب کی لاجواب رباعیات پیش خدمت ہے۔

خوابوں سے نکل آئو حقیقت دیکھو
دنیا کے مسائل کی اذیت دیکھو
دل جهن سے ہوا نامِ اجل سن کے سراج
ہستی پہ ذرا موت کی ہیبت دیکهو

ہاں عشق، تری نیم نگاہی کا ہے نام
وصلت کی ہوس زلف پناہی کا ہے نام
کافی نہیں لاالہ کہنا اے شیخ
ایماں، نگہہ و دل کی گواہی کا ہے نام

کچھ برشِ آبرو میں کمی لگتی ہے
لہجے میں کسک گویا چھپی لگتی ہے
تم رازِ دوعالم نہ کرو فاش سراج
جذبات نچوڑا تو لہو چیخ اٹھا

Best Urdu Rubaiyat By Seraj ul Arfeen Seraj 

Best Urdu Rubaiyat By Seraj ul Arfeen Seraj

موت آئی تو اندیشۂ جاں ختم ہوا
اب سلسلۂ سود و زیاں ختم ہوا
پیدا ہوئے معصوم گنہگار مرے
ہستی ترا احسانِ گراں ختم ہوا

جب پیشِ نظر، حور کھڑی تھی کچھ دیر
گویا کہ زباں گنگ غشی تھی کچھ دیر
اس نے دمِ رخصت کہا حافظ اللہ
ہم دونوں کی آنکھوں میں نمی تھی کچھ دیر

وہ عالمِ بالا کا نظارہ ہے کہ بس
انبوہ تجلّی لئے تارا ہے کہ بس
انساں کی نمو دیکھ کے حیراں ہیں ملک
نقاشِ ازل نے یوں سنوارا ہے کہ بس

عقبیٰ کی خلش سینۂ دنیا کی خراش
آئینہء شاعر میں ہر اک راز ہیں فاش
وہ ذ ہنِ دوعالم سے اتر جاتا ہے
جو شخص نہیں پیکرِ احساس تراش

Seraj ul Arfeen Seraj Poetry In Urdu

Best Urdu Rubaiyat By Seraj ul Arfeen Seraj

یہ ریزہ خیالی یہ دھڑکتے الفاظ
گو، کرب میں ڈوبے ہیں سسکتے الفاظ
اوراق کے کاندھے پہ ہیں کونین کے غم
دیکھے نہیں جاتے یہ بلکتے الفاظ

لگتا ہے محبت ہے کبھی کچھ بھی نہیں
بنتی ہوئی قسمت ہے کبھی کچھ بھی نہیں
یہ کاٹ ہے کیسی تری شمشیر میں دوست
تکلیف میں شدت ہے کبھی کچھ بھی نہیں

کچھ شعر کرشمائی بھی ہو جاتے ہیں
کچھ باعثِ رسوائی بھی ہو جاتے ہیں
جل جاتے ہیں کچھ لوگ حسد سے لیکن
کچھ آپ کے شیدائی بھی ہو جاتے ہیں

سقراط و ارسطو تھے، جہاں وہ دیدہ تهے
فن ، آذر و خیام کے بھی یکتا تھے
کب حق ادا کر تا ہے زمانہ ان کا
جو لوگ بڑے معرکتہ الآراء تهے

Seraj ul Arfeen Seraj Shayari 

Best Urdu Rubaiyat By Seraj ul Arfeen Seraj

ناکامیِ الفت کی کہانی پانی
وصلت کے ہے سائے میں جوانی پانی
وہ کون تھا احساس کے پنگھٹ پہ سراج
تھیں صبح تک آنکھیں تری پانی پانی

حیرت گہہِ دنیا ہے سنبھل کر چلئے
ہرگام پہ دھوکا ہے سنبھل کر چلئے
منہ پھیر کے چھوڑ آئے گا مرقد میں سراج
مطلب کا زمانا ہے سنبھل کر چلئے

Seraj ul Arfeen Seraj 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *