(بیدم شاہ وارثی صاحب کی خوبصورت غزل مکینِ دل (حصّہ اوّل، حصہ دوم

(بیدم شاہ وارثی صاحب کی خوبصورت غزل مکینِ دل (حصّہ اوّل، حصہ دوم

(بیدم شاہ وارثی صاحب کی خوبصورت غزل مکینِ دل (حصّہ اوّل، حصہ دوم

مکینِ دل نہ سمجھے پردہ دارِ لامکاں سمجھے
کہاں تھے تم مگر ہم کم نگاہی سے کہاں سمجھے

سراپا درد ہوں میں کوئی کیا میری فغاں سمجھے
جو مجھ سا درد والا ہو وہ میری داستاں سمجھے

ہوئے خاموش جب فطرت کو اپنا ترجماں سمجھے
ہر اک غنچے کو دل ہر خار کو اپنی زباں سمجھے

میں صدقے اس سمجھ کے اب مآلِ عرض کیا سمجھوں
مری رودادِ غم تھی آپ جس کو داستاں سمجھے

کیئے ہیں راہ میں ہر ہر قدم پہ سینکڑوں سجدے
ہر اک ذرے کو ہم تیرا ہی آستاں سمجھے

بنایا خوگرِ صبر و رضا تیرہ نصیبی نے
کہ بجلی کی چمک کو ہم چراغِ آشیاں سمجھے

(مکینِ دل (حصّہ دوم

(بیدم شاہ وارثی صاحب کی خوبصورت غزل مکینِ دل (حصّہ اوّل، حصہ دوم

مذاقِ جستجو کی اس طرح توہین ہوتی ہے
بتائیں کیا تمہیں اب تک جہاں سمجھے وہاں سمجھے

حدودِ فہم سے راز و نیازِ عشق بڑھ جائیں
نا سمجھوں راز داں کو میں نا میری راز داں سمجھے

فقط تھا امتحاں منظور جذبِ شوقِ کامل کا
اٹھے پردے تو رازِ خندہ ہائے پاسباں سمجھے

فلک پر تھا دماغ اپنا جو سر تھا پائے ساقی پر
دلیلِ تازہ ہاتھ آئی زمیں کو آسماں سمجھے

وضو ہو خونِ دل سے موت سجدے پر کرے سبقت
جنابِ شیخ ارکانِ نمازِ عاشقاں سمجھے

بھلا دیر و حرم کی قید کیا اُلفت کے بندوں کو
جہاں بھی رکھ دیا سر یار ہی آستاں سمجھے

نا جس نے درسگاہِ عشق میں تعلیم پائی ہو
میری باتیں وہ کیا سمجھے وہ کیا میری زباں سمجھے

میں کہنے کو تو اس سے سرگذشت اپنی کہوں بیدم
مگر سن کر خدا ہی جانے کیا وہ بدگماں سمجھے

بیدم شاہ وارثی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *