Arwa Sajal Ghazals Collection | Arwa Sajal Poetry In Urdu

Arwa Sajal Poetry In Urdu

سرد دسمبر کی باتوں میں

سرد دسمبر کی باتوں میں
تیرا لہجہ—بول رہا ہے

“پیار تمہی سے بس کرتا ہوں”
کان میں امرت گهول رہا ہے

عشق کا رتبہ پوچھ رہے ہو
عشق سدا انمول رہا ہے

Arwa Sajal Poetry In Urdu

شاید اس نے یاد کیا ہو
من میرا کیوں ڈول رہا ہے

پیار کی کوئی حد نہیں پگلے
اور تو اس کو تول رہا ہے

دل کی مسند پر جو بیٹها
وہ قدموں میں رول رہا ہے

شام کا یہ دهندلاتا منظر
در یادوں کے کهول رہا ہے

سچ کڑواہٹ کے باعث ہی
شاید یوں بے مول رہا ہے

تیرے لئے تیرے یاروں سے
میل رہا ہے، جول رہا ہے

Arwa Sajal Poetry

میں جس کو کهوجنے میں در بدر ہوں

Arwa Sajal Poetry In Urdu

میں جس کو کهوجنے میں در بدر ہوں
وہی اک شخص مجھ میں جا بجا ہے

کمال آفریں ہے نبض تجھ پر
کہ روح تو عمر سے ماتم کدہ ہے

کیوں مرگ دل پہ ایسے ہو پریشاں
یہی تو اصل جائے حادثہ ہے

یہیں پہ نقش پا تهی کل خوشی بهی
جہاں پہ آج رنج و غم کهدا ہے

مرے سب ضابطے جس نے ہیں توڑے
اصولوں پہ وہ قائم خود رہا ہے

میرے ہر پل میں رہنے والے بتلا
کیوں صدیوں کی مسافت پر کهڑا ہے

نگاہیں مت چرا تو مجھ سے ایسے
میں تیرا اور تو میرا آئینہ ہے

تیری نفرت کی زد پہ ہے وہ لڑکی
محبت جسکو تم ہی نے کہا ہے

اے لفظوں کے کهلاڑی غور سے سن
تری ہر بات کے پیگ دغا ہے

غزل جو ایک ہی لکهی تهی تو نے
کسی کے واسطے وہ اب سزا ہے

Arwa Sajal Poetry

بهولے ہوؤں کی یاد دلاتی ہیں بارشیں

Arwa Sajal Poetry In Urdu

بهولے ہوؤں کی یاد دلاتی ہیں بارشیں
کچھ اسطرح سے اب کے ستاتی ہیں بارشیں

سازسکوت شب میں بوندوں کا رقص ہے
گزرے سموں کے گیت سناتی ہیں بارشیں

اشکوں کے گرد باندهے تهے پل میں نے ضبط کے
اب کیا کروں جو آ کے گراتی ہیں بارشیں

نیندوں سے دوستی کے وعدے کئے تو ہیں
کیسے نبهاؤں اب جو جگاتی ہیں بارشیں

صحرا کیا تها آنکھ کو خواہش نچوڑ کے
پهر آ کے تیرا ہجر اب مناتی ہیں بارشیں

تنہائی سے لپٹ کر کب تک کروں یہ زیست
اب آ ملو کہ بےحد ستاتی ہیں بارشیں

Arwa Sajal Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *