انجمن اربابِ فکروفن کویت کی تشکیلِ نو کے بعد بیادِ ساغر صدیقی (مرحوم) پہلا مشاعرہ

main-banner-2

گزشتہ دنوں پاک و ہند کے اردو زبان کے ادیبوں اور شاعروں کی کویت میں نمائندہ تنظیم انجمن اربابِ فکرو فن کویت کے انتخابات ہوئے جس میں معروف شاعر بدر سیماب صدر، جبکہ نوجوان شاعر و معروف ادبی وسماجی شخصیت سید صداقت علی ترمذی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے۔ مورخہ ۶۲ جولائی بروز جمعہ کو چیئرمین انجمن اربابِ فکروفن خالد سجاد احمد کی رہائش گاہ پر عظیم شاعر مرحوم ساغر صدیقی کی یاد میں عظیم الشان مشاعرے کا انعقاد کیا گیا۔ جس میں کویت میں مقیم نامور ادبی وعلمی شخصیات کے ساتھ ساتھ پاک وہند کے شعراءکرام نے بھی شرکت کی۔
جنرل سیکرٹری انجمن اربابِ فکروفن کویت سید صداقت علی ترمذی نے تمام معزز مہمانوں کو خوش آمدید کہتے ہوئے انجمن کے نومنتخب عہدیداران کا تعارف کروایا۔ سید صداقت علی ترمذی نے کہا کہ باہمی مشاورت سے ہم انجمن اربابِ فکروفن کویت کا دائرہ کار اب صرف شاعروں تک محدود نہیں رکھیں گے بلکہ کویت میں مقیم ہر قلمکارچاہے وہ اصنافِ ادب کے کسی بھی شعبے سے تعلق رکھتا ہواس کو انجمن کا حصہ بنانے کی بھرپور کوشش کریں گے تاکہ اردو زبان کی ترویج بہتراور وسیع طور پر کی جاسکے۔ محفلِ مشاعرہ کاآغاز تلاوت قرآن پاک سے کیا گیا main-bannerجس کی سعادت محترم خالد صاحب نے حاصل کی اور محمد اعجاز مغل نے بارگاہِ رسالتﷺ میں ہدیہ نعت پیش کیا۔مشاعرہ کی نظامت نامور و نوجوان کالم نگار اور ادیب محمد فیصل نے اپنے منفرد و جداگانہ انداز میں کی۔محمد فیصل نے مشاعرہ کے آغاز میں ساغر صدیقی مرحوم کے حالات زندگی، شخصیت، اور شاعری پر سیرِ حاصل گفتگو کی۔ محفلِ مشاعرہ کی صدارت نامور ونوجوان شاعر ظہیر مشتاق رانا نے فرمائی۔ مشاعرہ کے مہمانِ خصوصی کویت میں معروف قانون دان سید جعفر صمدانی ایڈووکیٹ اور محمد انعام الرحمن تھے۔ جبکہ انجینئر اشرف ضیا، محمد زبیر شرفی، اور اسسٹنٹ ویلفیئر اتاشی سفارت خانہ پاکستان محبوب عالم مہمانانِ اعزازی تھے۔ اس کے علاوہ کویت کی مذہبی وسماجی اور روحانی شخصیت حکیم طارق محمود صدیقی شانِ محفل اور محمد ندیم مغل رونقِ محفل تھے۔ محمد فیصل شعراءکرام کو کلام پڑھنے کے لئے مدعو کرتے گئے ۔محمد فیصل نے ساغر صدیقی کے اشعاراور اپنے دلفریب اندازِ بیان سے مشاعرے کو اپنے سحر میں جکڑے رکھا۔ شعراءکرام اپنے اعلیٰ کلام سے سامعین کو محظوظ کرتے رہے۔ اور خوب داد وتحسین وصول کرتے رہے۔ مہمانانِ اعزاز اشرف ضیا اور زبیر شرفی نے اظہارِ خیال کرتے ہوئے کہا کہ آج ایک شاندار ادبی شام تھی اور بہت عرصہ بعد کویت کی سرزمین پر ایسا پروقار مشاعرہ انعقاد پزیر ہوا ہے۔ مہمانِ خصوصی و معروف قانون دان سید جعفر صمدانی نے خطاب کرتے ہوئے نئے شعراءکرام کی خوب پزیرائی فرمائی اور ساغر صدیقی کے حوالے سے فکر انگیز گفتگو فرمائی۔ ان کا کہنا تھا کہ مشاہیر اردو ادب کی یاد میں ایسی محافل کا انعقاد دراصل اردو ادب کی خدمت ہے۔ جسے انجمن اربابِ فکروفن کویت نے خوبصورتی سے سرانجام دیا ہے۔ صدرِ محفل ظہیر مشتاق رانا نے میزبان، انتظامیہ سمیت شعراءکرام کے کلام کو سراہتے ہوئے خاص طور پر ذوالفقار ارشد ذکی اور سید صداقت علی ترمذی کی حوصلہ افزائی فرمائی۔ حاضرین محفل نے صدرِ محفل سے مختلف فرمائشیں کر کے کلام بھی سنا اور جی بھر کر داد وتحسین سے بھی نوازا۔ آخر میں نامور مذہبی وروحانی شخصیت حکیم طارق محمود صدیقی نے گزشتہ دنوں انتقال کرنے والے نوجوان رمیض جاوید، اور بزرگ شاعر مرحوم اصغر اعجاز چشتی سمیت امتِ مسلمہ کے تمام مرحومین کی بخشش کی دعا کی۔ میزبان و چیئرمین انجمن اربابِ فکروفن کویت خالد سجاد احمد نے تمام مہمانوں کا شکریہ ادا کیا اور اُن کے پرتکلف عشائیے کا بھی اہتمام کیا۔ محفلِ مشاعرہ میں شرکت کرنے والے شعراءمیں پہلی مرتبہ مشاعرہ پڑھنے والے محمد ریاض کے علاوہ محمود واسوآنہ، اقبال ساحر،یاسین سامی، ذوالفقار ارشدذکی، ابراھیم قاصد، خضر حیات خضر، صدا حسین صدا،عبداللہ عباسی، سید صداقت علی ترمذی، خالد سجاد احمد، صابر عمر، صفدر علی صفدر اور ظہیر مشتاق رانا کے نام شامل ہیں۔
شعراءکرام کا نمونہ کلام
یہ چراغاں تو مرے مہرباں مجبوری ہے
ورنہ راتوں میں ستارے ہی سماں باندھتے ہیں
چنابِ وقت کی موجوں کو کوئی سمجھائے
سبھی کے ہاتھ میں کچے گھڑے نہیں ہوتے
ظہیر مشتاق رانا (صدارت)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی جرم ہی ثابت نہ ملزموں میں شمار
ہمیں نصیب نے حبسِ بے جا میں رکھا ہے
ہم وہ دیپ ہیں جس کو جلانے والے نے
جلا دیا تو ہے لیکن ہوا میں رکھا ہے
صفدر علی صفدر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یوں خزاں دیکھ کے کیوں دل کو برا کرتے ہیں
آپ کو دیکھ کے تو پھول کھلا کرتے ہیں
ہم نے غربت میں بھی یوں زیست گزاری اپنی
جیسے زندان میں سلطان رہا کرتے ہیں
خالد سجاد احمد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھلا کے تم کو کہاں تک سکونِ دل ملتا
مگر وہ درد کی گہرائیاں چلی جاتیں
تمہارے دم سے تھیں محفل کی رونقیں ساری
تمہارے ساتھ تو تنہائیاں چلی جاتیں
صابر عمر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دن ہے وحشت میں کٹا، رات پریشاں گزری
دشت میں عمرِ رواں مثلِ بیاباں گزری
دستِ بیعت کی طرح ساتھ بِتانی تھی حیات
ہائے افسوس مگر دست و گریباں گزری
سید صداقت علی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راہِ جنوں میں اہلِ جنوں پاتے ہیں مرتبہ
ہوتا نہیں ہر ایک کو الہام عشق میں
منزل نہ پاسکا میںاسی بات کے سبب
رستہ مسافروں کو دکھانے میں رہ گیا
خضر حیات خضر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری چاہت کو سمجھ کب پائی
کتنی پاگل ہے یہ پاگل دنیا
آج کھو کر تجھے معلوم ہوا
عاشقی ایک مکمل دنیا
صدا حسین صدا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی اس شہر میں الفت سے کہاں بولتا ہے
اب تو ہر شخص ہی نفرت کی زباں بولتا ہے
بحث وتکرار میں رہتا ہے ذکی چپ لیکن
جس جگہ بولنا واجب ہو، وہاں بولتا ہے
ذوالفقار ارشد ذکی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کٹا کے انگلی شہیدوں کی صف میں بیٹھا ہے
وہ کام کچھ نہیں کرتا ہے نام کرتا ہے
تجھے خبر بھی نہیں ہے کہ تیرا عباسی
کہاں پہ صبح کہاں پہ اپنی شام کرتا ہے
عبد اللہ عباسی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے غم بھلانا چاہتا ہوں
ذرا سا مسکرانا چاہتا ہوں
جو بن کے رہنما بیٹھے ہیں قاصد
انہیں انساں بنانا چاہتا ہوں
ابراھیم قاصد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شمس و قمر،نجم کی نہیں رہی حاجت
روشنی سے ہمکلام ہونے لگا ہوں
گلابوں کو میں نے جب چھونا چاہا
وہاں آئی تری حدت کی خوشبو
یاسین سامی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبتوں کے یہ سلسلے یونہی چلتے رہیں
وہ جب بھی ملتا ہے بس یہی دعا دیتا ہے
اور جانتا ہوں میں اِک ایسے شخص کو ساحر
جو جفاﺅں کا صلہ بھی وفا دیتا ہے
اقبال ساحر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس نگر میں چار سُو جھوٹ کا اجارہ ہو
پھر وہاں صداقت کو داد کون دیتا ہے
وہ کہہ رہا تھا تیرا لہجہ بدل گیا ہے
اسے خبر نہیں شہر میں کیا کیا بدل گیا ہے
ریاض محمد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دنیا تے لکھاں مخلوکاں نے پر سوہنی مخلوق انسان ایں
کوئی آکھے عیسیٰ ،کوئی آکھے نانک، کوئی آکھے سب کجھ رام ایں
اے پتھر کجھ نیں دے سکدا جہڑا پتھر خود بے جان ایں
جے منگنڑاں ایں تاں اُس رب کولوں منگ جہڑا دنیاں دا رحمان ایں
بھل جائیں دا گیتا ، گرنتھ تے بائبل جدوں پڑے گا پاکا قرآن ایں
پراں بھن محمود اے پتھر دی مورت جِن سمجھیا توں بھگوان ایں
محمود واسوآنہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *