بجائے کوئی شہنائی مجھے اچھا نہیں لگتا شاعر عامر امیر

amir-ameer

بجائے کوئی شہنائی مجھے اچھا نہیں لگتا

محبت کا تماشائی مجھے اچھا نہیں لگتا

عامر امیر کی ویڈیو دیکھنے کے لئے یہاں  کلک کریں

وہ جب بچھڑے تھے ہم تو یاد ہے گرمی کی چھٹیاں تھیں

تبھی سے ماہ جولائی مجھے اچھا نہیں لگتا

وہ شرماتی ہے اتنا کہ ہمیشہ اس کی باتوں کا

قریباً ایک چوتھائی مجھے اچھا نہیں لگتا

نہ جانے اتنی کڑواہٹ کہاں سے آ گئی مجھ میں

کرے جو میری اچھائی مجھے اچھا نہیں لگتا

مرے دشمن کو اتنی فوقیت تو ہے بہر صورت

کہ تو ہے اس کی ہمسائی مجھے اچھا نہیں لگتا

نہ اتنی داد دو جس میں مری آواز دب جائے

کرے جو یوں پذیرائی مجھے اچھا نہیں لگتا

تری خاطر نظر انداز کرتا ہوں اسے ورنہ

وہ جو ہے نا ترا بھائی مجھے اچھا نہیں لگتا

bajā.e koī shahnā.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

mohabbat tamāshā.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

vo jab bichhḌe the ham to yaad hai garmī chhuTTīyāñ thiiñ

tabhī se maah july mujhe achchhā nahīñ lagtā

vo sharmātī hai itnā ki hamesha us bātoñ

qarīban ek chauthā.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

na-jāne itnī kaḌvāhaT kahāñ se aa ga.ī mujh meñ

kare jo merī achchhā.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

mire dushman ko itnī fauqiyat to hai bahar-sūrat

ki hai us ham-sā.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

na itnī daad do jis meñ mirī āvāz dab jaa.e

kare jo yuuñ pazīrā.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

tirī ḳhātir nazar-andāz kartā huuñ use varna

vo jo hai tirā bhaa.ī mujhe achchhā nahīñ lagtā

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *