Aik Radeef 5 Ghazals Intikhab Arwa Sajal

      No Comments on Aik Radeef 5 Ghazals Intikhab Arwa Sajal
Aik Radeef 5 Ghazals
انتخاب: اروی سجل صاحبہ
تضادِ جذبات میں یہ نازک مقام آیا تو کیا کرو گے
میں رو رہا ہوں تو ہنس رہے ہو میں مسکرایا تو کیا کرو گے
مجھے تو اس درجہ وقتِ رخصت سکوں کی تلقین کر رہے ہو
مگر کچھ اپنے لئے بھی سوچا میں یاد آیا تو کیا کرو گے
کچھ اپنے دل پہ بھی زخم کھاؤ مرے لہو کی بہار کب تک
مجھے سہارا بنانے والو، میں لڑکھڑایا تو کیا کرو گے
Aik Radeef 5 Ghazals
Aik Radeef 5 Ghazals
ابھی تو تنقید ہو رہی ہے مرے مذاقِ جنوں پہ لیکن
تمہاری زلفوں کی برہمی کا سوال آیا تو کیا کرو گے
ابھی تو دامن چھڑا رہے ہو، بگڑ کے قابل سے جا رہے ہو
مگر کبھی دل کی دھڑکنوں میں شریک پایا تو کیا کرو گے
قابلؔ اجمیری
Aik Radeef 5 Ghazals
Aik Radeef 5 Ghazals
یہ مسکراتے تمام سائے، ہوئے پرائے تو کیا کرو گے
ہوا نے جب بھی مرے بدن کے دِیے بجھائے تو کیا کرو گے
تمہاری خواہش پہ عمر بھر کی جدائیاں بھی قبول کر لوں
مگر بتاؤ ! بغیر میرے جو رہ نہ پائے تو کیا کرو گے
وہ جن میں میرے عذاب تیرے، سراب اُبھرے یا خواب ڈوبے
وہ سارے لمحے تمہاری جانب پلٹ کے آئے تو کیا کرو گے
بغیر در کے کسی بھی گھر میں گھِرے ہوئے ہو یہ فرض کر لو
اور ایسے عالم میں مِل سکے نہ جو میری رائے تو کیا کرو گے
ابھی تو میرے غلاف ہاتھوں میں مطمئن ہیں پہ بعد میرے
جو آندھیوں میں چراغ اپنے یہ تھرتھرائے تو کیا کرو گے
تمہاری آنکھوں میں عکس میرا اگر نہ ہو گا تو کیسا ہو گا
سماعتوں کے شجر پہ پنچھی نہ چہچہائے تو کیا کرو گے
کرو گے کیا جو مرے بدن سے دھویں کی اِک دِن لکیر اُٹھی
لکیر سے پھر ہزار چہرے نکل کے آئے تو کیا کرو گے
وہ جن خیالوں میں رہ کے تم سے مری بھی پہچان کھو گئی ہے
انہی خیالوں کے سب مسافر ہوئے پرائے تو کیا کرو گے
یہ سوچتے ہو چلا گیا وہ تو چھت پہ جاؤ گے کس لیے تم
کہ اب کے ساون کی بارشوں میں جو سب نہائے تو کیا کرو گے
ہے دسترس میں ابھی بھی طاہر اُٹھا کے اب اس کو پی بھی ڈالو
مشاہدوں میں ہی ہو گئی گر یہ ٹھنڈی چائے تو کیا کرو گے
طاہر عدیم
Aik Radeef 5 Ghazals
Aik Radeef 5 Ghazals
کسک رہی گر ، گنوائیں نیندیں ، نہ چین پایا تو کیا کرو گے
گئی رتوں نے مری طرح سے تمہیں رلایا تو کیا کرو گے
یہ شان، عہدہ، یہ رتبہ ،درجہ ، ترقیوں کا یہ طنطنہ سا
کسی بھی لمحے نے کر دیا گر تمہیں پرایا تو کیا کرو گے
ابھی ہیں معقول عذر سارے،جواز بھی ہیں بجا تمہارے
کبھی جو مصروف ہو کے میں نے تمہیں بھلایا تو کیا کرو گے
چراؤ نظریں ، چھڑاؤ دامن،بدل کے رستہ بڑھاؤ الجھن
تمہیں د عاؤں سے پھر بھی میں نے، خدا سے پایا ، تو کیا کرو گے
رحیم ہے وہ ، کریم ہے وہ ،وہی مسیحا ،وہی خدا ہے
اسی نے سن لیں مر ی دعائیں ، جو رحم کھایا تو کیا کرو گے
پریا تابیتا
Aik Radeef 5 Ghazals
Aik Radeef 5 Ghazals
کسی پپیہے نے , کوئی برہا کا گیت گایا تو کیا کروگے
ابھی تو پھاگن کا ہے مہینہ , جو ساون آیا تو کیا کرو گے
.
ہنسیں گی کلیاں، کھلیں گے غنچے، بچھے گی پھولوں کی سیج لیکن
کیا تھا آنے کا جس نے وعدہ ,, وہی نہ آیا تو کیا کرو گے
.
ابھی تو ہے دوپہر کا عالم , ابھی تو چھایا نہیں اندھیرا
جدا تمہارے بدن سے ہوگا , تمہارا سایہ تو کیا کرو گے
.
افق پے نظریں جما کے تم نے , کیا بھروسہ جن آہٹوں پر
ان آہٹوں سے بھی تم نے آخر , فریب کھایا تو کیا کرو گے
.
یہ مشورہ اپنے دل سے کر لو , شکستِ جام و سبو سے پہلے
تمہاری توبہ کا بادلوں نے , مذاق اڑایا تو کیا کرو گے
.
قتیل تم جس کو چاہتے ہو , چھپاؤ لاکھ اس کا نام پیارے
تمہاری سنجیدگی کو موسم نے , گدگدایا تو کیا کرو گے
قتیل شفائی
Aik Radeef 5 Ghazals
Aik Radeef 5 Ghazals
جو میری آنکھوں نے دیکھا لوگو !! اگر بتادوں تو کیا کرو گے
جو سُن رہے ہو وہ کچھ نہیں ہے!! میں سب سُنا دوں تو کیا کرو گے
یہ ہڈی بوٹی پہ پلنے والے !! تمھیں بھی جاں سے عزیز تر ہیں
میں اِن کے گورے نَسب کا شجرہ کہیں مِلا دوں تو کیا کرو گے
یَتیم دھرتی کے قاتلوں سے !! کوئی نہیں جو قصاص مانگے
میں اَپنے بَچوں کو دَرس دے کر ابھی لگا دوں تو کیا کرو گے
اے گونگو !! بہرو !! جیو گے کب تک زمیں کے سینے پہ بوجھ بن کے !!
میں سَارے ناگوں کے سب ٹھکانے تمھیں بتا دوں تو کیا کرو گے
یہ لکھنا پڑھنا یہ کہنا سُننا چلے گا کب تک خِرد کے مارو !!
میں اَپنی کاغذ قلم کی دُنیا ابھی جلا دوں تو کیا کرو گے
اگر طلب ہے تمھیں کہ دیکھو !! وہ پہلے قطرے کا سُولی چڑھنا !!
میں کوئے جاناں سے سُوئے مقتل !! قدم اُٹھا دوں تو کیا کرو گے
تمھاری آنکھوں میں دَم نہیں ہے !! کہ سہہ سکیں وہ کوئی سویرا !!
میں شَب کے سینے پہ مونگ دَل کے دِیا جلادوں تو کیا کرو گے
یہ سچ کا ہیضہ جسے ہوا ہے !! وہ تُم میں باقی کہاں رہا ہے
جو سو رہا ہے منافق عابی !! اُسے جگادوں تو کیا کرو گے
عابی مکھنوی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *