افضل گوہر شاعری کا جادوگر

      No Comments on افضل گوہر شاعری کا جادوگر
افضل گوہر

افضل گوہر صرف شاعر نہیں بلکل شاعری کا جادوگر ہے  | ارشد محمود ارشد

ارشد محمود ارشد

ارشد محمود ارشد

افضل گوہر کا تعلق بھلرواں | سرگودھا سے ہے اور ان کا شمار سرگودھا کے نامور شعرا میں ہوتا ہے میں انہیں شاعری کا جادوگر کہتا ہوں کیونکہ ان کے شعروں میں وہ سحر انگیزی ہے جو قاری کو مکمل طوری پر اپنی گرفت میں لے لیتی ہے اور ان کے اشعار کا مطالعہ جتنی بار کیا جائے ہر بار الگ منظر کشی کرتے نظر آتے ہیں ان کے کلام میں وہ مٹھاس ہے جسے قاری بخوبی محسوس کر سکتا ہے
جی جناب بات ہو رہی ہے محترم جناب افضل گوہر کی ۔

افضل گوہر راؤ ۱۹۶۵ء کو شجاع آباد (ملتان ) میں پیدا ہوئے

افضل گوہر

افضل گوہر

پہلے پاکستان آرمی میں ملازمت اختیار کی اور ریٹائرمنٹ کے بعد آج کل پولٹری میڈیسن کے کاروبار سے منسلک ہیں

ان کے ادبی اثاثے میں۔۔۔
اچانک ۔۔۔۔۔ ۲۰۰۱ء
ہجوم ۔۔۔۔۲۰۰۶ء
ہمقدم ۔۔۔۔۔۔۔۔۲۰۰۷ء
جھلک ۔۔۔۔۔۔۔ ۲۰۱۳ء
نمایاں ۔۔۔۔۔۔۲۰۱۶ء (زیرِاشاعت)
آئیے ان کے کلام سے کچھ اشعار دیکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔
نیند آئی نہ کُھلا رات کا بستر مجھ سے
گفتگو کرتا رھا چاند برابر مجھ سے
اپنا سایہ اُسے خیرات میں دے آیا ھوں
دھوپ کے ڈر سے جو لپٹا رھا دن بھرمجھ سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کس جہان کی ترتیب میں لگا ھوا ھوں
پڑا ھوا ھے یونہی سارا کام کاج مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ھوا مجھ سا نہیں کوئی اگر میرے بعد
سلسلہ تخت نشینی کا نہیں بھی ھوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یونہی نہیں میں روشنی کے باغ سے جُڑا ھوا
کہیں پہ کوئی چاند ہے چراغ سے جُڑا ھوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عجیب رنگ ونور سے بھری ہوئی ہے کائنات
وہاں ترے نجوم سے یہاں مرے چراغ سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے یہ سوچ کے دشمن کو بھی ٹھکرایا نہیں
بعض پتھر بڑے نایاب نکل آتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رنگوں کے طلسمات نے یوں گھیر لیا ھے
منظر سے نکلتا ھوں تو بینائی کا ڈر ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نجانے کیسی مری جاں میں آگ جلتی ہے
کہ سانس لوں تو گریباں میں آگ جلتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔

افضل گوہر کی کتاب ’’ نمایاں ‘‘ کا سرورق

افضل گوہر کی کتاب ’’ نمایاں ‘‘ کا سرورق

۔۔۔۔۔۔
ایسے منظر بدل رہا ہے مرا
خواب پانی پہ چل رہا ہے مرا
آگ خود تو نہیں لگی ہوگی
جس طرح باغ جل رہا ہے مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نواحِ جاں سے نہ گزری کبھی ہوائے وصال
وگرنہ پوچھتا میں کیسا باغ تھا میرا
کھنڈر کے خالی پڑے طاقچے بتاتے ہیں
یہیں کہیں کبھی روشن چراغ تھا میرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسا چراغ دیکھنے والے سے رہ گیا
میں روشنی پسند اُجالے سے رہ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مٹی سے میں تو پھوٹ پڑا پیڑ کی طرح
جو ہوگیا ہے رزقِ زمیں اور کوئی تھا
وہ جس سے آئنے میں لڑائی ہوئی مری
اندر کا آدمی تو نہیں اور کوئی تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِس لئے دیر تک جلا نہیں ہے
یہ دِیا اِس منڈیر کا نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون کہتا ہے ہم نہیں رہیں گے
خاک ہوکر بھی ہم یہیں رہیں گے
چھوڑ جائیں گے ایک دن دُنیا
ہم کہاں تک یہاں مکیںّ رہیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔
ہجرت کا ہمیں حکم بھی کس وقت ملا ہے
جاتے ہوئے جب کوئی نہیں دیکھنے والا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *