پاکستان اور یورپی یونین کے مابین نیا اسٹریٹجک باہمی تعاون منصوبہ




پاکستان اور یورپی یونین کے مابین نیا اسٹریٹجک باہمی تعاون منصوبہ (اسٹرٹیجک انگیجمنٹ پلان) پر معاہدہ طے پا گیا
معاہدے پر دستخط کی پروقار تقریب برسلز میں منعقد ہوئی

کراچی ( خورشید رحمانی سے ) یورپی یونین کی جانب سے ان کی اعلیٰ نمائندہ فیڈریکا موگرینی نے جبکہ پاکستان کی طرف سے وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے معاہدے پر دستخط کیے
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی نئے اسٹریٹجک پلان پر دستخط کے بعد یورپی یونین کی اعلی عہدیدار فیڈریکا موگرینی کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو

میں بے حدمسرور ہوں کہ آج پاکستان اور یورپی یونین (ای یو) نے ’سٹرٹیجک انگیجمنٹ پلان‘پر دستخط کردئیے ہیں۔

پاکستان, یورپی یونین اورا س کے تمام رکن ممالک کے ساتھ اپنے تعلقات کو بے حد اہمیت دیتا ہے۔ یورپی یونین ہماری روایتی حلیف، تجارت اور سرمایہ کاری میں پاکستان کی بڑی شراکت دار ہے۔ ہمارا تعاون, جمہوری اقدار، کثیرالشراکتی، باہمی ہم آہنگی اور احترام کی مشترک اقدار پر مبنی ہے۔ یہ امر باعث اطمنان ہے کہ ہم نے پاکستان اور یورپی یونین کی شراکت کو تزویراتی انگیجمنٹ پلان (ایس ای پی) کی صورت میں ترقی دی ہے۔

میں دونوں جانب سے سٹرٹیجک انگیجمنٹ پلان کو حتمی شکل دینے کے لئے کوششوں کو سراہتا ہوں جو مستقبل میں تعاون کے لئے ٹھوس بنیاد فراہم کرتا ہے۔یہ دونوں جانب سے تعلقات کو وسعت دینے اور نئے سامنے آنے والے حقائق کے مطابق انہیں مزید بہتر بنانے کی خواہش کا مظہر ہے۔

’ایس ای پی‘مختلف شعبہ جات میں ہمارے تعاون کو مزید فروغ دینے کے لئے ایک طویل المدتی عزم ہے۔ یہ مستقبل کے تقاضوں کے مطابق ہونے کے علاوہ پاکستان اور یورپی یونین کے درمیان سٹرٹیجک تعاون کا جامع فریم ورک ہے جس میں امن وخوشحالی، تجارت وسرمایہ کاری، نقل مکانی کرنے والوں کے امور، پائیدار ترقی، توانائی، تعلیم اور ثقافت کے فروغ پر باہمی بنیادوں پر اتفاق شامل ہے۔

امن اور سلامتی کے شعبے میں دونوں اطراف تعاون کریں گی، ایک دوسرے کے بہترین تجربات سے سیکھیں گی جس میں سائیبر سکیورٹی، منی لانڈرنگ اور کسی بھی بحران سے نبردآزما ہونا شامل ہے۔

یہ منصوبہ علوم کے تبادلے، عوامی سطح پر روابط، ترقیاتی منصوبوں اور اچھی حکمرانی کے شعبہ جات میں تعاون کے نئے امکانات کو روشن کرے گا۔

پاکستان اور یورپی یونین، “ری ایڈمیشن ایگریمنٹ” کے عنوان سے قریبی تعاون پر کار بند ہیں۔ ہم مل کر اپنے شہریوں کے وسیع تر باہمی مفاد میں، نقل مکانی اور نقل وحرکت کے امور پر جامع مذاکرات کریں گے۔

’ایس ای پی‘ کی چھتری کے نیچے پاکستان اور یورپی یونین تجارت وسرمایہ کاری کے تعلقات کو مزید وسعت اور مضبوط بنانے کے لئے کام کریں گے اور پبلک پرائیویٹ شراکت داری، کاروباری سطح پر مذاکرات اور کارپوریٹ سیکٹر میں مشترکہ منصوبوں کے لئے نئے امکانات تلاش کریں گے۔

یہ منصوبہ تعلیم، بشمول اعلی تعلیم، فنی اور پیشہ وارانہ تربیت کے شعبوں میں تعاون بڑھانے کے لئے پاکستان اور یورپی یونین کے رکن ممالک کے درمیان پل کا کام کرے گا۔

میں یورپی یونین کی نمائندہ ء خصوصی ، فریڈریکا موغیرینی سے آج اہمیت کے دیگر امور خاص طورپر علاقائی معاملات پر بات چیت کا خواہاں ہوں۔

پاکستان کی خارجہ پالیسی، امن اور ترقی کے تعلق میں پنہاں ہے جنہیں ایک دوسرے سے جدا نہیں کیاجاسکتا۔
وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں ہم ثابت قدمی کے ساتھ پرامن ہمسائیگی کی تعمیر، کلیدی شراکت داروں کے ساتھ مضبوط تعلقات ، علاقائی اور عالمی معیشتوں کیساتھ زیادہ مربوط ہونے کے لئے کام کررہے ہیں۔ اس تمام تناظر میں پاکستان اور یورپی یونین کی شراکت داری نمایاں ہے۔ ہمارے تبادلہ خیال میں یہ پہلو شامل ہوں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *